محمد احسن قریشی

سسّی: کراچی پریس کلب کے سامنے تم لوگ کیا کررہے تھے کہ انہوں نے مردوں کے ساتھ خواتین کو بھی تشدد کا نشانہ بنایا؟

سچل: ہم بھوک ہڑتالی کیمپ میں جبری طور پر گمشدہ کارکنان کی بازیابی کے لیئے احتجاج کررہے تھے۔

سسّی : یہ تو تمھارا جمہوری حق ہے۔ پر سنا ہے انہیں تم لوگوں کی جانب سے لگائے گئے نعرے پر غصّہ تھا۔

سچل: ہاں! اور انہوں نے ہمارے نعرے کو اپنے عمل سے سچ ثابت کردیا۔

سسّی: کونسا نعرہ؟

سچل: “یہ جو دہشت گردی ہے اسکے پیچھے وردی ہے, یہ جو ماراماری ہے اسکے پیچھے وردی ہے”۔